Ticker

6/recent/ticker-posts

خواجہ آصف کی کیس میں سماعت ملتوی کرنے پر عمران خان پر جرمانہ

خواجہ آصف کی کیس میں سماعت ملتوی کرنے پر عمران خان پر جرمانہ
اسلام آباد:
سابق وزیراعظم عمران خان پر ہفتہ کو وزیر دفاع خواجہ آصف کے خلاف 10 ارب روپے کے ہتک عزت کیس کی سماعت ملتوی کرنے کی درخواست پر 5 ہزار روپے جرمانہ عائد کیا گیا۔

ایڈیشنل سیشن جج عدنان خان نے پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کے سربراہ پر پارٹی کے جاری جلسوں میں مصروفیت کے باعث سماعت ملتوی کرنے کی درخواست پر 5 ہزار روپے جرمانہ عائد کیا۔

سماعت کے دوران مسلم لیگ ن کے رہنما کے وکیل ایڈووکیٹ علی شاہ گیلانی عدالت میں پیش ہوئے تاہم عمران خان کے بیان پر جرح ملتوی کرنا پڑی۔

عدالت نے خان کے وکیل کی جانب سے سماعت ملتوی کرنے کی استدعا منظور کر لی جس کے بعد سماعت 24 ستمبر کو ہو گی۔

اس سال کے شروع میں، اسلام آباد ہائی کورٹ نے خواجہ آصف کی درخواست کو قبول کر لیا جس میں عمران خان کے خلاف ہتک عزت کے مقدمے کے حوالے سے اس وقت کے وزیر اعظم عمران خان کو جرح کرنے کے حق سے محروم کرنے کے فیصلے کو چیلنج کیا گیا تھا۔
اسلام آباد ہائی کورٹ کے چیف جسٹس اطہر من اللہ نے ریمارکس دیئے کہ کیس کی روزانہ کی بنیاد پر سماعت کی جائے اور وقت پر فیصلہ کیا جائے۔

ان کا مزید کہنا تھا کہ عدالت ٹرائل کورٹ کو دو ماہ میں کیس کا فیصلہ کرنے کا حکم دے گی۔

سماعت کے دوران عدالت نے خواجہ آصف کے وکیل سے استفسار کیا کہ وہ کیس کو کیوں ملتوی کر رہے ہیں، یہ دعویٰ کیا کہ وہ کیس میں غیر ضروری تاخیر کر رہے ہیں، انہیں ایسا کرنے سے خبردار کیا۔

وزیر اعظم کے وکیل کا حوالہ دیتے ہوئے عدالت نے کہا کہ وزیر اعظم سے جرح کرنا مدعا علیہ کا حق ہے۔ اس نے مزید کہا کہ جرح بیان ریکارڈ ہونے کے اگلے دن ہونی چاہیے تھی۔

پی ٹی آئی کے سربراہ نے 2012 میں آصف کے خلاف شوکت خانم میموریل ٹرسٹ کے فنڈز میں غیر شفافیت، منی لانڈرنگ اور بے نام کمپنیوں کے استعمال کے الزامات لگانے پر 10 ارب روپے کا ہتک عزت کا دعویٰ دائر کیا تھا۔

اپنے مقدمے میں، سابق وزیر اعظم نے یکم اگست 2012 کو آصف کی پریس کانفرنس کا حوالہ دیا تھا، جس میں انہوں نے الزام لگایا تھا کہ پی ٹی آئی کے سپریمو نے اپنے کینسر ہسپتال کو عطیہ کی گئی بڑی رقم "رئیل اسٹیٹ جوئے" میں کھو دی تھی۔ خان نے ان الزامات کو 'جھوٹا اور ہتک آمیز' قرار دیا۔

Post a Comment

0 Comments